اہم خبریںپاکستان

بھارت تیزی سے بڑے پیمانے پر مسلمانو ں کی نسل کشی کی طرف بڑھ رہا ہے ، بھارت مکمل نسل کشی کے دس میں سے آٹھویں مرحلہ پر پہنچ چکا ہے ،

عالمی تنظیم جینوسائڈ واچ

0
0

واشنگٹن ۔ (اے پی پی):عالمی تنظیم جینوسائڈ واچ نے کہا ہے کہ بھارت تیزی سے بڑے پیمانے پر مسلمانو ں کی نسل کشی کی طرف بڑھ رہا ہے اور اس حوالہ سے بھارت مکمل نسل کشی کے دس میں سے اٹھویں مرحلہ پر پہنچ چکا ہے ۔

دنیا بھر میں نسل کشی کے واقعات پر نظر رکھنے والی تنظیم جنیو سائیڈ واچ کے بانی گریگوری ایچ سٹینٹن جو کمبوڈین جینو سائیڈ پراجیکٹ کے بانی سربراہ اور الائنس اگینسٹ جینو سائیڈ کے چیئرمین بھی ہیں نے کہا ہے کہ بھارت کی مختلف ریاستوں خصوصاً ریاست کرناٹک میں مساجد ، مسلمانوں کے گھروں اور ان کے کاروباروں پر حملے تسلسل کے ساتھ اور بغیر کسی روک رکاوٹ کے جاری ہیں جو بہت جلد بڑے پیمانے پر مسلمانو ں کی نسل کشی میں تبدیل ہونے والے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ کسی اقلیتی گروہ کی نسل کشی کے اکا دکا واقعات کے بڑے پیمانے پر اور مکمل نسل کشی میں تبدیل ہونے کو دس مراحل میں تقسیم کیا گیا ہے اور بھارت اس وقت ان دس میں سے آٹھویں مرحلہ میں ہے۔ حال ہی میں بھارت کے لئے جینو سائیڈ الرٹ جاری کرنے والے پروفیسر گریگوری ایچ سٹینٹن جنہوں نے مکمل نسل کشی کے لئے دس مراحل کا تعین کیا ہے نے کہا کہ بھار ت میں فسادات کی حالیہ لہر کے دوران ریاست کرناٹک میں بی جے پی کے رہنمائوں کی پشت پناہی کے ساتھ ہندو انتہا پسند مسلمانوں کو نشانہ بنا رہے ہیں۔ وہ مساجد پر حملے کررہے ہیں۔مسلمانوں کی املاک نذر آتش کر رہے ہیں اور ہندوئوں کو کہہ رہے ہیں کہ وہ مسلمان ٹوراینڈ ٹریول آپریٹرز اور ٹیکسی ڈرائیورز کی خدمات حاصل نہ کریں ۔

ہندوئوں کے مذہبی مقامات کے قریب عرصہ دراز سے کاروبار کرنے والے مسلمانوں کو وہاں سے بے دخل کیا جارہا ہے۔ ریاست میں یہ رجحان کورونا وائرس کی عالمگیر وبا کے دور سے جاری ہے جب ہندوئوں نے مسلمانوں پر ملک میں کورونا وائرس کی وبا پھیلانے کے الزامات عائد کرتے ہوئے ان کے کاروباروں کا بائیکاٹ کرنا شروع کر دیا تھا۔بھارتی مسلمانوں کے مطابق سرکاری ادارے ان کے خلاف ایسے واقعات کو روکنے میں کوئی کردار ادا نہیں کر رہے۔

بھارتی ریاستوں بہار، مدھیہ پردیش، گجرات، گوا، کرناٹک اور دیگر کئی ریاستوں میں مسلمانوں پر تسلسل کے ساتھ حملے کئے جارہے ہیں۔امریکا میں مقیم بھارتی مسلمانوں کی تنظیم انڈین امریکن مسلم کونسل کی طر ف سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ یہ سارے واقعات بھارت کو مسلمانوں کی بڑے پیمانے پر اور مکمل نسل کشی کے دہانے پر لے آئے ہیں۔

کونسل نے اپنے اس بیان کے ثبوت میں بھارت میں مسلمانوں کے خلاف تشدد کے متعدد واقعات کی وڈیوز بھی جاری کی ہیں۔ تنظیم کے مطابق اس سارے عرصے میں بھارت کے ہندو شہری بھی مسلمانوں کے خلاف انتہائی تعصب کا مظاہرہ کر رہے ہیں۔حجاب کے معاملہ پر بھارتی حکومت اور عوام کا رویہ سب کے سامنے ہےاور بھارتی میڈیا بھی مسلمانوں کے خلاف انتہائی تعصب کا مظاہرہ کر رہا ہے۔

0
0

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Related Articles

Back to top button