اہم خبریںپاکستان

بطور وزیراعظم میں کبھی اپنے لوگوں کو کسی ملک کیلئے قربان نہیں کرسکتا، عمران خان

0
0

پاکستان تحریک انصاف کے باغ جناح میں جلسے سے خطاب کے دوران چئیرمین پی ٹی آئی اور سابق وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ بطور پرائم منسٹر 22 کروڑ پاکستانی میری ذمہ داری ہیں، میں ان کو کسی کی جنگ میں لے جاؤں اور میرے لوگ اور فوج شہید ہوں یہ میری ذمہ داری ہے، میں کبھی اپنے لوگوں کو کسی ملک کیلئے قربان نہیں کرسکتا۔

انہوں نے کہا کہ میں کسی ملک کے خلاف نہیں ، نہ میں اینٹی انڈین ہوں، نہ اینٹی یورپین نہ میں اینٹی امریکن ہوں، میں انسانیت کے ساتھ ہوں، میرا رب رب العالمین ہے جو سب انسانوں کا خدا ہے اور میرے لیڈر رحمت اللعالمین ہیں جو سب انسانوں کیلئے رحمت بن کر آئے، اس لیے میں کسی قوم کے خلاف نہیں۔

چئیر مین تحریک انصاف نے کہا کہ میں دوستی سب سے چاہتا ہوں لیکن غلامی کسی کی نہیں چاہتا، یہ جو سازش ہوئی ہے یہ آپ کو غلام رکھنے کی ایک سازش ہے، ایک میر جعفر کو ہمارے اوپر مسلط کردیا گیا۔

عمران خان نے کہا کہ میر جعفر وہ غدار تھا جس نے انگریزوں کے ساتھ مل کر بنگال کی مغل سلطنت کے گورنر سراج الدولہ سے غداری کی اور بنگال انگریزوں کے ہاتھ چلا گیا۔ اس کے بعد بنگال پر انگریزوں نے ٹیکس لگائے ، کسانوں سے پیسہ نکالا، کسان غریب ہوگئے قحط پڑ گیا، جب انگریز آیا تو بنگال سب سے امیر صوبہ تھا اور جب وہ گیا تو بنگال سب سے غریب صوبہ رہ گیا۔

سابق وزیراعظم نے کہا کہ آج سے تین چار مہینے ہمیں پتا چلا کہ امریکی سفارت خانے میں انہوں نے اپوزیشن اور ہمارے وہ ساتھی جو لوٹا ہوئے ان سے ملاقاتیں شروع کیں، اور پھر وہ کئی صحافی جو خاص طور پر اس سازش میں ملوث تھے ان کی بھی میٹنگ امریکی سفارت خانے میں شروع ہوگئیں، ایک صحافی نے بتایا کہ آپ کو پتا ہے ہمارے اوپر بہت پیسہ خرچ ہورہا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ پھر امریکا میں ہمارے سفیر کی ملاقات امریکی آفیشل ڈونلڈ لو کے ساتھ ہوتی ہے۔ وہ پاکستانی ایمبیسیڈر کو کہتا ہے کہ اگر تم نے عمران خان کے خلاف عدم اعتماد کامیاب نہیں ہوئی تو پاکستان کو بڑی مشکلوں کا سامنا کرنا پڑے گا، اور اگر عدم اعتماد کامیاب ہوئی تو پاکستان کو معاف کردیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ مجھے یہ بتاؤ کہ اس سے زیادہ شرمناک دھمکی کیا ہوگی 22 کروڑ لوگوں کی قوم کو دی جارہی ہے اور ملک کے الیکٹڈ وزیراعظم کو دی جارہی ہے۔

عمران خان نے کہا کہ معصومانہ سوال یہ ہے پرائم منسٹر میں ہوں تو وہ دھمکی کس کو دے رہا ہے کہ پرائم منسٹر کو ہٹاؤ، اس کے بعد سازش شروع، ہمارے 20 اراکین اسمبلی ضمیر جاگ جاتے ہیں، 20 25 کروڑ جیب میں ڈال لیتے ہیں، اتحادی چھوڑ جاتے ہیں تو بتاؤ پاکستانیوں کہ یہ سازش تھی یا نہیں۔ کونسے ملک کو اس طرح کی دھمکی دی جاتی ہے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ سپریم کورٹ سے سوال پوچھتا ہوں کہ جو مراسلہ تھا کیا سپریم کورٹ کو اس کی تفتیش نہیں کرنی چاہئیے تھا؟

عمران خان نے کہا کہ آتے ساتھ ہی چیری بلاسم میر جعفر کو حکم ملا ڈو مور کرو دہشت گردی کیخلاف اور کام کرو۔

انہوں نے بتایا کہ میرے دور میں جب صدر ٹرمپ نے کہا کہ پاکستان سے دہشتگردی ہو رہی ہے، میں نے جواب دیا کہ پاکستان وہ ملک ہے جس نے سب سے زیادہ آپ کی جنگ میں قربانیاں دی ہیں، بجائے ہمارا شکریہ ادا کرنے کہ تنقید کررہے ہیں۔

سابق وزیراعظم نے کہا کہ آپ جب اپنے ملک کا دفاع کرتے ہیں ملکی مفادات پر اسٹینڈ لیتے ہیں تو وہ آپ پر پریشر ڈالتے ہیں لیکن آپ کی عزت کرتے ہیں، لیکن جب آپ بوٹ پالش کرتے ہیں چیری بلاسم سے تو وہ آپ کی عزت نہیں کرتے آپ کو اور دباتے ہیں۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ اگر یہ سازش آج کامیاب ہوجاتی ہے تو پاکستان کا کوئی وزیراعظم امریکا کی دھمکی کے سامنے کھڑا نہیں ہوگا۔

عمران خان نے کہا کہ امریکا کو مجھ سے کیا گلا ہے میں نے امریکا کا کیا بگاڑا ہے؟  جب انٹرویو میں مجھ سے پوچھا کہ کیا آپ امریکا کو بیس دیں گے یعنی پھر سے ان کی جنگ میں جنگ میں شریک ہوں گے تو میں نے کہا ایبسولیوٹلی ناٹ۔

ان کا کہنا تھا کہ بطور پرائم منسٹر 22 کروڑ پاکستانی میری ذمہ داری ہیں، میں ان کو کسی کی جنگ میں لے جاؤں اور میرے لوگ اور فوج شہید ہوں یہ میری ذمہ داری ہے، میں کبھی اپنے لوگوں کو کسی ملک کیلئے قربان نہیں کرسکتا۔ میں چیری بلاسم بوٹ پالش نہیں، میں اس ملک کا میر جعفر نہیں جو باہر کی قوتوں سے ملکر سازش کرکے ایک الیکٹڈ حکومت گرادے۔

انہوں نے خطاب کے دوران کہا کہ شہباز شریف پر نیب اور ایف آئی اے میں 40 ارب روپے کے کرپشن کیسز ہیں، اگر شہباز شریف ان کیسز کے ساتھ مغربی معاشرے میں ہوتا تو اس کو مقصود چپڑاسی بھی نہ رکھتے۔ ہمارے ملک کی توہین اس سے زیادہ کیا ہوسکتی ہے کہ ایک ضمانت کے اوپر آدمی انہوں نے وزیراعظم بنا دیا، اپنے ملک میں ان کے کیا اخلاقی اسٹینڈرڈ ہیں اور ہمارے ملک میں اس کو مسلط کیا، یعنی یہ ہمیں کتنی نیچی نظر سے دیکھتے ہیں۔

عمران خان نے کہا کہ شہباز شریف نے آتے ہی اپنے خلاف کرپشن کیسز کی تحقیقات کرنے والے افسران کو ہٹا دیا۔ اب دوسرے افسر بھی ان سے ڈریں گے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ یہ اقتدار میں آتے ہی اب انتقامی کارروائی کریں گے، یہ کوشش کریں گے فارن فنڈنگ کیس میں تحریک انصاف کو میچ سے ہی باہر کردیں۔

کراچی کیلئے جو مانگا کبھی عمران خان سے نہ نہیں سنا، اسد عمر

پی ٹی آئی کراچی کے سیکریٹری اسدر عمر نے جلسے سے خطاب میں کہا کہ کام تو ہم نے سارے پاکستان کیلئے کیا لیکن دل سے جو کام کیا وہ کراچی کیلئے کیا۔

انہوں نے کہا کہ میں عمران خان کا دو باتوں پر شکریہ ادا کرنا چاہتا ہوں، ایک تو یہ کہ کراچی کیلئے جو مانگا کبھی عمران خان سے نہ نہیں سنا، گرین لائن بنانی ہے بنا لو، سرکولر ریلوے بنانی ہے بنالو، پانی کیلئے ترسا ہوا ہے کراچی، 26 کروڑ گیلن کا کے فور منصوبہ بنانا ہے بنا لو، فریٹ کوریڈور بنانا ہے بنالو، 625 ارب روپے کا تاریخی پیکج کراچی کو دینا ہے دیدو۔

اسد عمر نے کہا کہ اس کی وجہ یہ ہے کہ پاکستان کا واحد لیڈر ہے جو کسی ایک شہر کا نہیں ایک زبان بولنے والے کا نہیں، ایک خطے اور ایک مذہب کا بھی نہیں بلکہ ہر پاکستانی کا لیڈر ہے۔

انہوں نے کہا کہ دوسری بات جس پر آپ کا شکریہ ادا کرنا چاہتو ہوں وہ یہ کہ  میرے دونوں بیٹے یونیورسٹی میں پڑھنے کیلئے انگلینڈ گئے، اور پڑھائی ختم کرنے کے بعد ایک دن بھی اضافی انگلینڈ میں نہیں رکے وہ وطن واپس آگئے، کیونکہ انہیں بچپن سے یہ بتایا گیا کہ دنیا کا خوبصورت ترین ملک اور عظیم ترین قوم پاکستان ہے۔ لیکن گزشتہ ایک مہینے سے ملک کے جو حالات ہیں، حرام کے پیسوں سے ضمیر خریدے گئے، وفاداریاں بدلی گئیں، سات سمندر پار سے اٹھنے والی آواز کی گونج پاکستان میں سنائی دی، راتوں رات اتحاد ٹوٹنے شروع ہوگئے۔ میں سوچ رہا تھا کہ میرے بچے کیا کہیں گے کہ کیا یہ پاکستان ہے جس کی بات کرتے تھے؟

انہوں نے کہا کہ لیکن میں آپ کا شکریہ ادا کرتا ہوں  آپ نے سکھایا جب ایک خوددار لیڈر کھڑا ہوتا ہے تو کس طرح قوم اس کے ساتھ کھڑی ہوتی ہے۔

2008 میں بھی جو بائیڈن کو “ایبسولیوٹلی ناٹ” کہا، علی زیدی

رہنما تحریک انصاف علی زیدی نے جلسے سے خطاب میں کہا کہ  جب تک اس ملک میں عمران خان ہے کوئی غیر ملکی طاقت اس ملک پر قابض نہیں ہوسکتی اور ہم ہونے بھی نہیں دیں گے۔

سابق وزیر برائے پورٹ اینڈ شپنگ کا کہنا تھا کہ 2008 میں ہماری ایک میٹنگ ہوئی تھی جس میں جو آج امریکی صدر ہیں جوبائیڈن وہ اس وقت سینیٹر تھے، اس وقت بھی انہوں نے عمران خان سے پوچھا کہ آپ مشرق و مغرب کو سمجھتے ہیں بتائیں ہم آپ کی کیا مدد کریں۔

انہوں نے کہا کہ اس وقت بھی عمران خان نے کہا تھا کہ میری ایک مدد کرو میری کوئی مدد نہ کرو، میں جب اس ملک کا وزیراعظم بنوں گا پاکستان کی عوام کی طاقت سے بنوں گا۔

میں نے عمران خان سے ایک خوددار زندگی گزارنا سیکھا ہے، کبھی پاکستان کی سالمیت، نظریے اور قوم پر جو شخص کبھی نہیں جھکے گا اس کا نام عمران خان ہے۔

جو اس موقع پر عمران خان کو چھوڑے وہ نسلی اور اصلی نہیں، شیخ رشید

عوامی مسلم لیگ کے سربراہ اور سابق وزیر داخلہ شیخ رشید نے کراچی کی عوام اور اس کے جذبے کو سلام پیش کرتے ہوئے کہا کہ میں نے فاطمہ جناح کے جلسے میں شرکت کی، آپ لوگوں نے اس کا ریکارڈ بھی توڑ دیا۔

انہوں نے کہا کہ وہ لوگ جو لندن  اور گجرانوالہ سے فوج کو گالی دیتی تھی، جن باپ بیٹے پر عدالت فرد جرم عائد کرنے والی تھی، اسی روز اس چور اور ڈاکو کو وزیراعظم بنا دیا گیا۔

ان کا کہنا تھا کہ جو قومیں عمران خان جیسا لیڈر پیدا کرتی ہیں اس کے ساتھ انٹرنیشنل طاقتیں قذافی اور صدام جیسا سلوک کرتی ہیں، انہیں جیلوں میں ڈالا جاتا ہے۔

شیخ رشید نے کہا کہ میں نے چار مہینے پہلے عمران خان سے ہاتھ جوڑ کر کہا تھا کہ اسمبلیاں توڑ دیں، گورنر راج لگا دیں، ایمرجنسی لگا دیں۔

انہوں نے ایم کیو ایم کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ ایم کیو ایم والوں یہ ڈاکو آصف زرداری نوابشاہ سے کونسلر نہیں بن سکا، جو اپنے باپ حاکم زردای کی سیٹ پر ایم این اے نہیں بن سکا، اس نے بینظیر کی جعلی دستاویز سے اس ملک پر قبضہ کیا۔

سابق وزیر داخلہ کا کہنا تھا کہ اگر عمران خان کو واپس نہیں لائے تو جیلیں بھر دیں گے۔ انہوں نے مزید کہا کہ  جو اس موقع پر عمران خان کو چھوڑے وہ نسلی اور اصلی نہیں۔

جلسے کے شرکاء کا حلف

تحریک انصاف کے رہنما فیصل جاوید نے کراچی جلسے کے شرکاء سے حلف اٹھانے کی اپیل کی۔

انہوں نے شرکاء سے درخواست کی کہ اپنے موبائل فونز کی لائٹیں جلا لیں اور جو الفاظ وہ کہہ رہے ہیں انہیں دہرائیں۔

شرکاء نے فیصل جاوید کے کہنے پر حلفیہ الفاظ دہرائے “ہم عہد کرتے ہیں کہ ہم اللہ کے فرمان امر بالمعروف و نہی عن المنکر پر عمل کریں گے، ہم ہمیشہ حق کے ساتھ کھڑے ہوں گے اور باطل کو رد کریں گے، ہم عہد کرتے ہیں کہ ہم اللہ کے سوا کبھی کسی کے سامنے نہیں جھکیں گے، ہم عہد کرتے ہیں کہ ہم اپنی عزت نفس، اپنی پاکستانیت، اپنی خود مختاری اور اپنی خودداری پر کبھی سمجھوتا نہیں کریں گے، ہم انشاءاللہ حقیقی آزادی حاصل کریں گے، ہم سبز ہلای پرچم تلے یکجا رہیں گے، اللہ تعالیٰ ہمیں کامیابی عطا فرمائے۔ آمین۔”

اس موقع پر عمران خان سمیت پوری پی ٹی آئی قیادت نے بھی حلف اٹھایا۔

عمران خان کو وزارت عظمیٰ کے عہدے سے ہٹائے جانے کے بعد پی ٹی آئی کراچی میں پاور شو کررہی ہے جس سے عمران خان ودیگر خطاب کریں گے۔

پی ٹی آئی کے جلسے کے اعلان کے بعد سے ہی کراچی میں شہریوں کا جوش و خروش عروج پر ہے گزشتہ رات سحری سے ہی لوگوں کی آمد شروع ہوگئی اور اب پی ٹی آئی سپورٹرز کا انتظار ختم ہونے کو ہے کیونکہ عمران خان جلسہ گاہ میں پہنچ گئے ہیں۔

0
0

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Related Articles

Back to top button