حلقہ فکروفنسعودی عربسمندر پارپاکستانی

ادب جذبات کو زبان بخشتا ہے اور ادب بات کرنے کے سلیقے کے علاوہ اخلاقی اقدار کو بھی فروغ دیتا ہے

سعودی عرب میں ادبی تنظیم حلقہءفکروفن کی جانب سے ادبی نشست کا اہتمام

25
1

ریاض (عروج اصغر) سعودی عرب میں ادبی تنظيم حلقہ فکروفن کی جانب سے ادبی نشست کا اہتمام کیا گیا جس میں تنظیم کے عہدیداروں سمیت صحافیوں نے بھی بھرپور شرکت کی ادبی نشست میں حلقہ فکروفن کے صدر ڈاکٹر ریاض چوہدری نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ادب جذبات کو زبان بخشتا ہے اور ادب بات کرنے کے سلیقے کے علاوہ اخلاقی اقدار کو بھی فروغ دیتا ہے حلقہ فکروفن سعودی عرب میں گزشتہ چار دہائیوں سے ادب کی خدمت کر رہا ہے اور ادبی محافل، مشاعرے منعقد کروا رہا ہے جس سے شعراء کرام اور ادیبوں نے جنم لیا اور انہیں ایک ایسا پلیٹ فارم میسر آیا جس پر چل کر وہ آگے بڑھے اور ادب کے فروغ کے ساتھ ساتھ اپنا نام بھی پیدا کیا آج بھی ہماری یہی کوشش ہے کہ ہم ادبی محافل کا سلسلہ جاری رکھیں

حلقہ فکروفن کے جنرل سیکرٹری وقار نسیم وامق کا کہنا تھا کہ پاکستان میں ایسے ایسے نامور شعرا کرام اور ادیبوں نے جنم لیا ہے جنھوں نے ادب میں ایسی بے شمار خدمات کو انجام دیا ہے جن کو کبھی فراموش نہیں کیا جاسکتا ہے آج بھی ادب کی دنیا میں بڑے اہم نام اور دیگر افراد اپنی خدمات کو سرانجام دے رہے ہیں مگر ادب کے بہتر فروغ کے لئے ضروری ہے کہ حکومتی سرپرستی حاصل ہو شعراء کرام کے کام کو سراہا جائے اور ان کے تخلیق کردہ ادب کے فروغ کے لئے ایسا ماحول پیدا کیا جائے جس سے ادب سے لگاو رکھنے والے بھی بہتر انداز میں مستفید ہوسکیں

ادبی نشست کے میزبان ظفر اقبال کا کہنا تھا کہ یہ بڑی ہی خوش قسمتی ہے کہ سعودی عرب میں حلقہ فکروفن جیسی ادبی تنظیم موجود ہے جو ادب تخلیق کرنے والوں اور ادب شناسی رکھنے والوں کے لئے کام ک کررہی ہے حلقہ فکروفن کے ساتھ جڑ کر ایک اچھا احساس ہو رہا ہے اور خوش ہو رہی ہے کہ یہاں بہت کچھ سیکھنے کو ملے گا ادبی نشست میں شعر و شاعری کی محفل بھی خوب جمی جس میں ڈاکٹر ریاض چوہدری ،ڈاکٹر محمود باجوہ، وقار نسیم وامق، مخدوم امین تاجر، ذکاءاللہ محسن، قلب عباس اور میزبان ظفر اقبال نے غزلیں اور اشعار پیش کیے اور خوب داد سمیٹی

25
1

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Related Articles

Back to top button